عمومی مضامین˛Mixed essay

وقتی نجوم، پانچواں گھر

Posted On فروری 21, 2020 at 11:01 شام by / 2 Comments

خالد اسحاق راٹھور کی وقتی نجوم پر کتاب راٹھور وقتی نجوم  کافی عرصہ قبل شائع ہو چکی ہے۔ زیر نظر مضمون اسی سلسلہ کی ایک کڑی ہے۔اس مضمون میں وقتی زائچہ کے پانچویں گھرکےامور پر بحث کی گئی ہے۔  یہ مضمون راہنمائے عملیات سے لیا گیا ہے۔
وقتی نجوم

راٹھور وقتی نجوم
از قلم: خالد اسحٰق راٹھور

خالد اسحاق راٹھور کی وقتی نجوم پر کتاب راٹھور وقتی نجوم کافی عرصہ قبل شائع ہو چکی ہے۔ زیر نظر مضمون اسی سلسلہ کی ایک کڑی ہے۔ یہ مضمون راہنمائے عملیات سے لیا گیا ہے۔
علم نجوم کو علوم مخفی میں جو اہمیت حاصل ہے اس امر کو سمجھنا ہر طالب علم کے لیے ضروری ہے۔ جس قدر وسعت علم نجوم کے حصے میں آئی ہے اس کا مقابلہ نہیں کیا جاسکتا وقتی نجوم کو سمجھنے کے لیے پیدائشی نجوم میں مہارت حاصل کرنا حد درجہ ضروری ہے۔ اس کے بعد ہی کوئی فرد طبی نجوم، سیاسی نجوم، موسمی نجوم وغیرہ میں مہارت حاصل کر سکتا ہے۔ تاہم پیدائشی نجوم کے بعد وقتی نجوم کا شعبہ ایسا ہے جس کے بارے اگر یہ کہا جائے کہ جس منجم نے وقتی نجوم میں مہارت حاصل نہیں کی اس کو نجوم ہی نہیں آتا تو بے جا نہ ہو گا۔ لیکن یاد رکھیں وقتی نجوم میں مہارت پیدائشی نجوم میں مہارت اور تجربہ کے ساتھ مشروط ہے۔ راٹھور وقتی نجوم کے نام سے ایک انتہائی اہم کتاب ادارہ پہلے ہی شائع کر چکا ہے۔ زیر نظر مضمون بھی اسی سلسلے کی کڑی ہے۔ انشاء اللہ آنے والے دنوں میں وقتی نجوم کے حوالے سے مزید معلومات ان مضامین کے ذریعے آپ تک پہنچانے کی کوشش کی جائے گی۔
پانچواں گھر
وقتی نجوم میں پانچواں گھر جن اہم امور سے منسوب ہے اس کی مکمل تفصیل مذکورہ بالا کتاب (راٹھور وقتی نجوم) میں دی گئی ہے۔ تاہم زیر نظر مضمون میں پانچویں گھر سے منسوب خاص سوال اور ان کے جواب کو اخذ کرنے کے بارے میں بیان کیا جائے گا۔
سوال: کیا میرے گھر اولاد ہو گی؟
جواب: اس سوال کے جواب میں جو امور آپ نے مد نظر رکھنے ہیں ان میں اولیت آپ نے طالع جو سائل کو ظاہر کر رہا، پانچواں گھر جو زائچہ میں اولاد سے منسوبی گھر ہے، حاکم طالع، حاکم پنجم اور قمر کو دینی ہے۔ دونوں گھروں کے کواکب ایک دوسرے کو ناظر ہوں تو سائل یا سائلہ صاحب اولاد ہوں گے۔ دونوں ناظر نہ ہوں گے لیکن قمر ان کو ناظر ہو تو بھی اولاد ہو گی۔ قمر کے علاوہ کوئی اور کوکب یہ خدمت سرانجام دے رہا ہو تو بھی اولاد کا امکان ہے، کوکب کی کیفیت کے مطابق۔
مندرجہ بالاحالتوں میں کوکب اگر باہم ناظر یا حالت اتصال میں نہ ہو تو برعکس نتائج کا حصول ہو گا۔
لیکن وہ قواعد جو اولاد کے ہونے کو ظاہر کرتے ہیں اس وقت تک مکمل نتائج نہ دیں گے جب تک اولاد کے نہ ہونے کی شرائط وقتی زائچہ میں نہ دیکھ لی جائیں۔ بعض اوقات زائچہ میں دونوں طرح کے احکام ہوتے ہیں اور منجم صرف ایک سمت یعنی اولاد کے ہونے یا نہ ہونے پر توجہ دے کر غلطی کرنے کا باعث بنتا ہے۔
مندرجہ بالا کے علاوہ اگر پہلے کا حاکم پانچویں اور پانچویں کا حاکم پہلے گھر ہو تو بھی اولاد ہو گی۔ یہ ایک اعلیٰ کیفیت ہے۔
زہرہ اگر زائچہ میں قوی ہو تو یہ ایک عمومی علامت ہے صاحب اولاد ہونے کی اوراگر کمزور اور نحس ہو تو اولاد کے حصول میں رکاوٹ اور بنجرپن کی عمومی علامت ہے۔
دلائل زائچہ سے منسوب گھر اور کواکب اگر ثمر آور بروج میں ہوں تو بھی اولاد کو ظاہر کرتے ہیں۔ لیکن اگر بنجر بروج میں ہوں تو پھر حصول اولاد میں مشکل ہو جاتی ہے۔
مشتری کا زائچہ میں مثبت کردار بھی صاحب اولاد ہونے کا اشارہ ہے۔
اولاد کے منسوبی برج میں اگر زحل یا کوئی اور کوکب نحس ہو کر براجمان ہو تو اپنی طبع کے مطابق اولاد کےنہ ہونے اور ضائع ہونے، مرنے اور التواء وغیرہ کو ظاہر کرتا ہے۔
دلائل باہم اچھے برے ہوں تو اولاد کے ضائع ہونے اور ہونے دونوں کو اپنی اپنی طاقت جو ان کو وقتی زائچہ میں حاصل ہے کے مظہر میں۔
ٍ طالع میں سرطان عقرب یا حوت ہوں تو اولاد کی نشاند ہی کرتے ہیں۔
طالع میں اگر اسد، سنبلہ، حمل اور جوزا ہوں تو بالحاظ ترتیب قاطع اولاد کی علامت ہیں۔
طالع اگر ثابت برج ہو اور بلحاظ سعادت قوی ہو اور اس میں مشتری یا کوئی اور کوکب سعادت کے ساتھ ہو تو اولاد کی علامت ہے۔ اس کے برعکس حالت برعکس نتائج لائے گی۔
پانچویں کو ناظر نحس کواکب دلائل اولاد میں کمزوری لاتے ہیں۔
پانچویں قابض نحس اور حالت رجعت میں واقع کواکب بری خبر کی علامت ہیں۔ (جاری ہے(

2 thoughts on “وقتی نجوم، پانچواں گھر

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے