اسلام˛Islam

ام المومنین سیدہ سودہ بنت زمعہ رضی اللہ تعالی عنھا

Posted On اپریل 20, 2020 at 5:51 شام by / No Comments

ام المومنین سیدہ سودہ بنت زمعہ رضی اللہ تعالی عنھا

نسب شریف:

ام المومنین سیدہ سودہ بنت زمعہ قیس بن عبد شمس بن عبدود‘ قرشیہ عامر یہ ہیں۔ ان کا نسب افضل الانبیاء و المرسلیں ﷺ کے نسب شریف سے لوی میں مل جاتا ہے۔ ان کی کنیت ام الاسود ہے۔

ہجرت حبشہ:

سیدہ سودہ رضی اللہ تعالی عنھا ابتدا ہی میں مکہ مکرمہ میں ایمان لائیں ان کے شوہر حضرت سکران ؓ بن عمر و بن عبدالشمس بھی ان کے ساتھ اسلام لائے جن سے عبدالرحمن نامی لڑکا پیدا ہوا۔ سیدہ سودہ ؓ نے حضرت سکران ؓ کے ہمراہ حبشہ کی طرف ہجرت ثانیہ کی۔ ان کے شوہر مکہ مکرمہ بروایت دیگر حبشہ میں فوت ہوئے۔

سیدہ کا خواب:

سیدہ سودہؓ جب مکہ مکرمہ واپس تشریف لائیں تو رحمت عالم ﷺ کو اس حال میں ملاحظہ فرمایا کہ قدم مبارک ان کی گردن پر رکھا ہوا ہے۔ اپنا یہ خواب حضرت سکران ؓ کو سنایا تو انھوں نے فرمایا کہ اگر خواب بعینہ ایسا ہی ہے جیسا کہ تم بیان کر رہی ہو تو میں بہت جلد اس دنیا سے رخصت ہو جائوں گا اور پیارے آقا ﷺ تمہیں چاہیںگے۔ پھر کچھ دنوں بعد حضرت سکران رضی اللہ تعالی عنہ وصال فرما گئے۔

نکاح مع سیدالمرسلین صلی اللہ تعالی علیہ وآلہ وسلم:

حضرت خدیجہ ؓکے وصال کے بعدپیارے آقاﷺ عرصہ تک مغموم رہے۔حضرت عثمان بن مظعون ؓ عنہ کی زوجہ حضرت خولہ بنت حکیم ؓ نے عقد ثانی کے لئے عرض کیا۔ حضور ﷺ نے فرمایا کہاں۔ خولہ نے عرض کیا آپ کے لئے کنواری بھی موجود ہے اور بیوہ۔ سرکارﷺ کے دریافت فرمانے پر خولہ نے عرض کیا کہ کنواری تو اس شخص کی بیٹی ہے جو ساری مخلوق میں آپ کو پیاراہے یعنی صدیق اکبر رضی اللہ تعالی عنہ کی بیٹی عائشہ صدیقہ ؓ اور بیوہ حضرت سودہ بنت زمعہ ؓ جو کہ آپ کی رسالت اور نبوت پر ایمان لا چکی ہیں۔ آقائے دو جہاں ﷺ نے فرمایا دونوں سے کہوں۔ حضرت خولہ حضرت ابوبکر صدیقؓ کے گھر تشریف لائیں اور ام رومان والدہ عائشہ صدیقہ ؓ اور حضرت ابوبکر صدیقؓ سے مدعا عرض کیا تو دونوں راضی ہو گئے اور حضرت عائشہ صدیقہ ؓ سے آپ کا عقد ہو گیا۔
بعض روایتوں کے مطابق حضرت خدیجہ الکبریؓکے وصال کے بعد حضرت سودہ ؓ حضور اکرم ﷺ کے نکاح میں آئیں اور بعض کے مطابق حضرت عائشہ صدیقہ ؓ سے حضور ﷺ کا نکاح ثانی ہوا۔
حضرت سودہ ؓ سے پانچ حدیثیںمروی ہیں ایک بخاری میں اور باقی چار سنن اربعہ میں مروی ہیں۔
وصال: سیدہ سودہ ؓ کا وصال ماہ شوال ۵۴ ھ میں حضرت معاویہ رضی اللہ تعالی عنہ کے دور مبارک میں ہوا۔ بموجب روایت دیگر دور خلافت حضرت عمر رضی اللہ تعالی عنہ میں ہوا۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے